پاکستان سمیت عالمی دریاؤں میں اینٹی بایوٹک کی بھرپور موجودگی کا انکشاف 23

پاکستان سمیت عالمی دریاؤں میں اینٹی بایوٹک کی بھرپور موجودگی کا انکشاف

لندن (آن لائن) سمیت دنیا بھر کے بہت سے حصوں میں اینٹی بائیوٹکس کی تعداد نے انکشاف کیا ہے کہ کئی دریاؤں میں اینٹی بائیوٹک کی مقدار محفوظ مقدار میں 100 فیصد سے زیادہ ہے. اس سلسلے میں منعقد ہونے والی عالمی سروے یہ معلوم ہے کہ آسٹریا، بھارت، پاکستان، بنگلہ دیش، کینیا، نائیجیریا اور یورپ، جہاں ممالک میں بائیوٹیکٹی کی اعلی شرح ہے.

اور کچھ جگہوں میں، مقررہ رقم 300 سے زائد مرتبہ ہے. برطانیہ کے یونیورسٹی، یارک یونیورسٹی نے 6 براعظموں میں 72 ممالک کو مکمل طور پر جائزہ لیا ہے، جس میں عام طور پر دریا پانی میں 14 انسداد بائیوٹیکٹس کا جائزہ لیا گیا تھا. 65 فیصد مقامات پر اینٹی بائیوٹیکٹس موجود ہیں. یہ بنگلہ دیش کے پانی میں 300 سے زائد مرتبہ اینٹی بائیوٹکس میں پایا گیا تھا اور مونونیکنڈول. یہ دوا جلد اور منہ کے انفیکشن میں مصروف ہے. دوسری طرف، 711 جگہوں میں سے 307، ایک اور بائیوٹیک مثلث پیشاب کی بیماریوں میں استعمال کیا جاتا ہے. 51 جگہوں میں & # 39؛ Suproblossons & # 39؛ مرکب سب سے زیادہ مقدار کی مقدار کا موازنہ کرتا ہے، اور یہ بدتر ہے کہ افریقہ اور ایشیا کے ندیوں سے بھی بدتر ہیں. اب دریا میں یہ تمام بائیوٹک نکاسیج یا گندا پانی پائپ پایا جا رہا ہے اور دریا پانی کو تباہ کر رہا ہے. ماحولیاتی یونیورسٹی یونیورسٹی کے پروفیسر اور ڈاکٹر الیلیئرئر بوسیل، جو اس رپورٹ پر کام کرتے ہیں، کہتے ہیں کہ یہ تحقیق ہماری آنکھوں کو کھولنے کے لئے کافی ہے جو دنیا کے بڑے دریاؤں میں بائیوٹیک کی خرابیوں کو ظاہر کرتی ہے. پینے کا پانی اینٹی بائیوٹک منشیات کو مزاحمت میں اضافہ کررہا ہے اور یہ ایک بڑی چیلنج ہے کہ اسے دریا مینجمنٹ ڈھانچے پر بہت پیسہ خرچ کرنا پڑے گا اور سخت قواعد و ضبط کرنا پڑے گا.

مزید پڑھیں:  ’ماحولیاتی تبدیلی‘ یہ انسانی حقوق کا بھی مسئلہ ہے

پوسٹ پاکستان سمیت گلوبل ندیوں میں بائیوٹیکٹی کی موجودگی کا دھماکہ پہلے پیش آیا جاوید چوم.

Download WordPress Themes Free
Download WordPress Themes
Download WordPress Themes Free
Download WordPress Themes
online free course
download intex firmware
Download Best WordPress Themes Free Download
free download udemy course

اپنا تبصرہ بھیجیں